24

ناصر جمشید کے گرد قانون کا شکنجہ سخت، ساتھی ملزموں نے برطانوی عدالت میں ایسا کام کر دیا کہ پاکستانی کرکٹر کیلئے بچنا مشکل ہو گیا


لاہور (ڈیلی پریس کانفرنس) سپاٹ فکسنگ کیس میں ملوث پاکستانی کرکٹر ناصر جمشید کے گرد قانون کا شکنجہ سخت ہونے لگا ہے اور ساتھی ملزمان کے اعتراف سے اوپنر کیلئے بھی اپنا دامن صاف ثابت کرنا مشکل ہو گیا ہے۔تفصیلات کے مطابق مانچسٹر کراﺅن کورٹ میں ساتھی ملزمان یوسف انور اور محمد اعجاز نے پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) اور بنگلہ دیش پریمیر لیگ (بی پی ایل) میں کرکٹرز کو رشوت کی پیشکش کرنے کا اعتراف کر لیا ہے جس کے باعث ناصر جمشید کیلئے بھی اپنا دامن صاف ثابت کرنا مشکلہ و گیا ہے، پی ایس ایل ٹو کے آغاز میں سامنے آنے والے سپاٹ فکسنگ سکینڈل میں شرجیل خان،خالد لطیف، شاہ زیب حسن اور محمد عرفان ملوث پائے گئے۔ناصر جمشید پر سہولت کاری کا الزام عائد کیا گیا اور ان سب کھلاڑیوں کو جرم کی نوعیت کے مطابق مختلف مدت کیلئے معطلی کی سزائیں بھی سنائی گئیں۔دوسری جانب ناصر جمشید برطانیہ میں گرفتار اور پھر ضمانت پر رہا ہوئے تھے، نیشنل کرائم ایجنسی کی تحقیقات مکمل ہونے کے بعد اب ان کا کیس مانچسٹر کے کراﺅنڈ کورٹ میں زیر سماعت ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں