24

حکومت نے عوام پر بجلیاں گرانے کا اعلان کردیا


اسلام آباد (ڈیلی پریس کانفرنس) گیارہ ماہ میں تحریک انصاف کی حکومت نے مزید 25بلین روپے اکٹھے کرنے کے لیے چوتھی مرتبہ بجلی کی قیمت میں پونے 2فیصد اضافے کی منظوری دیدی جس کااطلاق 300یونٹ سے زائد استعمال کرنیوالوں پر ہوگا۔ ڈیلی پریس کانفرنس کے مطابق چوتھی مرتبہ ہونیوالے اس اضافے کا مقصد سرکلر ڈیٹ کو کم کرکے آئی ایم ایف کی شرائط پر پورا اترنا تھا۔ حالیہ اضافے کا اطلاق یکم دسمبر سے ہوگا جو ایک سال تک نافذ رہے گا، یہ منظوری مشیر خزانہ حفیظ شیخ کی زیرصدارت کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی کے اجلاس میں دی گئی جس میں وزیر قومی غذائی تحفظ و تحقیق مخدوم خسرو بختیار،وزیر توانائی عمر ایوب خان،مشیر صنعت و پیداوار عبد الرزاق داﺅود اوروزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے پٹرولیم ندیم بابر شامل ہوں گے۔اقصادی کمیٹی نے گندم کی قیمت میں بھی پانچ فیصد اضافے کی منظوری دی جس کے بعد 40کلوگرام گندم 1365روپے کی ہوگئی ، پانچ سال بعد گندم کی قیمت بڑھی جبکہ تحریک انصاف کی حکومت سرکلر ڈیٹ کو روکنے کے لیے بجلی کی قیمتوں میں مسلسل اضافہ کرتی چلی جارہی ہے ، یہ اقدامات مطلوبہ نتائج حاصل کرنے کے لیے کیے جارہے ہیں۔ بجلی کی قیمتوں میں پہلا اضافہ رواں سال جون میں کیاگیا، اس کے بعد 14 جون اور پھر یکم اکتوبر کو بھی اضافہ کیا گیاتھا، ان تمام اضافوں کا مقصد آئی ایم ایف کی شرائط پر پورا اترنا تھا۔ادھر ڈیلی پریس کانفرنس کے مطابق ملک میں بجلی کے کل تین کروڑ صارفین میں سے 300 یونٹس ماہانہ استعمال کرنے والے دو کروڑ گھریلوصارفین پراس نوٹیفکیشن کا اطلاق نہیں ہو گا، جب کہ باقی ایک کروڑ صارفین میں 60 لاکھ صارفین کے لیے7 پیسے فی یونٹ کا اضافہ ہو گا جبکہ اقتصادی رابطہ کمیٹی نے مستقبل میں بجلی کی قیمتوں کے تعین کے طریقہ کار کو مزید جامع اور سہل بنانے کے لیے مشیر خزانہ و محصولات حفیظ شیخ کی سربراہی میں ایک کمیٹی قائم کردی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں